قومیممبئی

آسام میں تین مہاراشٹرمیں چار مبینہ پی ایف آئی کارکنان گرفتار

گوہاٹی ، 21اکتوبر ( ہندوتان اردو ٹائمز ) پچھلے مہینے مرکزی حکومت نے پی ایف آئی تنظیم پر پابندی لگا دی تھی اور بہت سے کارکنوں کو گرفتار کرلیا تھا۔اب آسام میں پولیس نے جمعہ (21 اکتوبر) کی صبح پی ایف آئی کے تین ارکان کو گرفتار کیا۔ایک خفیہ اطلاع کی بنیاد پر آسام پولیس نے آسام کے ضلع کامروپ کے ناگربیرا علاقے میں چھاپہ مارا جس کے دوران انہوں نے کالعدم پی ایف آئی تنظیم کے 3 ارکان کو گرفتار کیا۔

ایس پی ہتیش چری نے بتایا کہ اس دوران پی ایف آئی سے وابستہ ایک اور شخص کو بھی آسام پولیس نے حراست میں لیا ہے۔اسی وقت، مہاراشٹر میں جمعرات (20 اکتوبر) کو اے ٹی ایس نے پنویل سے پی ایف آئی کے 4 کارکنوں کو گرفتار کیا۔ مہاراشٹر اے ٹی ایس کو خفیہ اطلاع ملی تھی کہ وہ پنویل سکریٹری اور ممنوعہ تنظیم پی ایف آئی کے دو دیگر ارکان کے ساتھ میٹنگ کرنے والا ہے۔اس اطلاع کے بعد مہاراشٹر اے ٹی ایس نے موقع پر پہنچ کر ان چاروں کو گرفتار کر لیا۔ غور طلب ہے کہ گزشتہ ماہ مرکزی حکومت نے دہشت گردانہ سرگرمیوں میں ملوث ہونے اور مبینہ دہشت گردی کی فنڈنگ میں ملوث ہونے کے الزام میں پی ایف آئی پر پانچ سال کے لیے پابندی لگا دی ہے۔

مہاراشٹر میں اے ٹی ایس نے پنویل سے پی ایف آئی کے چار کارکنوں کو گرفتار کیا ہے۔ اے ٹی ایس نے پی ایف آئی کے پنویل سکریٹری اور ممنوعہ تنظیم کے دو دیگر ارکان کو پنویل میں ملاقات کی اطلاع ملنے کے بعد گرفتار کر لیا۔ اے ٹی ایس نے بتایا کہ انسداد دہشت گردی دستہ فی الحال اس معاملے کی تحقیقات کر رہا ہے۔

دوسری طرف سنبھل کے ایس پی ایم پی شفیق الرحمن بق نے پی ایف آئی ممبران کی گرفتاری کے بعد آر ایس ایس پربھی پابندی لگانے کا مطالبہ کیا ہے۔اے ٹی ایس نے کہا کہ مہاراشٹر اے ٹی ایس کو پاپولر فرنٹ آف انڈیا کے ارکان کی پنویل میں میٹنگ کے بارے میں خفیہ اطلاع ملی تھی۔ جس کے بعد اے ٹی ایس نے کارروائی کرتے ہوئے پی ایف آئی کے چار ارکان کو پنویل سے گرفتار کرلیا۔ غور طلب ہے کہ گزشتہ ماہ مرکزی حکومت نے دہشت گردی سے تعلق کے الزام میں پی ایف آئی پر پانچ سال کے لیے پابندی لگا دی تھی۔

ہماری یوٹیوب ویڈیوز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button