اشعار و غزل

"وہ چاہتے ہیں…! ” ہوائیں ان کے ماتحت ہوں ! محمد عباس دھالیوال

محمد عباس دھالیوال،
مالیر کوٹلہ ،پنجاب.
رابطہ 9855259650
abbasdhaliwal72@gmail.com

"وہ چاہتے ہیں…! ”
ہوائیں ان کے ماتحت ہوں
فضاؤں پہ ہو انھیں کا اختیار
گرفت میں چمن انھیں کی رہے
ہر گل انھیں پوچھ کر ہی کھلے
وہ چاہتے ہیں …!
روشن فلک پہ ہیں جتنے چراغ
تابانی کو ان کی وہ کر دیں پامال
ہر سِمت اندھیرے پھیلاتے ہوئے
پروانوں کو دم توڑتا چھوڑ دیں
وہ چاہتے ہیں …!
بہتے دریاؤں پہ لگائیں لگام
چشموں کے بہاؤ کو روک دیں
ممکن نہ ہو، گر اُنھیں روکنا
مخالف سِمت انھیں موڑ دیں
وہ چاہتے ہیں …!
بدل کر سبھی روایات یہاں
صدیوں پرانی غلامی سے پُر
تاریخی بدعات کے داغ کو
عصرِ حاضر پہ پھر تھوپ دیں
وہ چاہتے ہیں…!
اُڑتے پرندوں کے پَر نوچ لیں
پھولوں سے انکی ہنسی چھین لیں
زہر نفرتوں کا ہر جا پھیلا
محبت کے سب رَس سَوکھ لیں
وہ چاہتے ہیں جو…!
کوئی انھیں مگر سمجھائے تو
کہے ہے زمانہ، یہ دنیا جسے
بنی ہے کسی کی،نہ بنے گی کبھی
کہ دھوکے کاہے، یہ سب کاروبار…

مزید پڑھیں

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیجئے

Back to top button
Close
Close