اشعار و غزل

ایمان : تیرا ایمان, تیرا قرآن, تیری پہچان ہے مومن : شاہین ارم بنت سید صادق

••••ایمان••••

تیرا ایمان, تیرا قرآن, تیری پہچان ہے مومن

تیرا نعرہ, تیرا سینہ, تیرا ایمان ہے مومن

علیؓ کی قوم سے ہے تو, عمرؓ کی قوم سے ہے تو

تیرا مرنا شہیدی تھا تیری یہ شان ہے مومن

وہ سجدے بھی محمدﷺ کے اذان حبشیؓ کی ہوتی تھی

عدالت کافروں کی تھی جہالت بھی جہل کی تھی

وہ لشکر تھا ہزاروں کا بدر میں تین سو تھے ہم

زبان اللہُ اکبر تھی فتح اس رب نے ہی دی تھی

شہیدی بھی سُمیہؓ کی وہ کیا ایمان کی طاقت ہے

شہیدی بھی وہ حمزہؓ کی کیا ایمان کی چاہت تھی

وہ سر جو کٹ گئے سجدوں میں اے میرے اللہ

جو قربان ہوگئے حسنؓ یہی ان کی عبادت تھی

نہ بچ پائی کوئی چیونٹی ابراہہہ کے لشکر سے

نہ چل پائی کوئی چالیں کسی ظالم کافر کی

تجھے کہدوں تیرے بازو کبھی شمشیر ہوتے تھے

فتح یوں ہی نہی مل پائی ان کو جنگِ خیبر کی

کسی فرعونِ عبرت کی, خدائی نہ رہی باقی

کسی شدادِجنت کی,بڑائ نہ رہی باقی

یہ پتھر کے خداؤں کا یہ بدلہ آگ سے نمرود

قارون کے خزانے کی چابھی نہ رہی باقی

ہاں خنجر لفظ تیرے تھے,یقین فولاد کا تیرا

شہادت موت تھی تیری,تو کہتا تھا رسول اللہ

ہزاروں معجزے ہزاروں نبیوں کی دعوت

تیرا ایمان باقی ہے تو پھر سے آگ بھڑکا

شاہین ارم بنت سید صادق(7090559390) کرناٹک شیموگہ

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close