مضامین و مقالات

مہاراشٹراسمبلی انتخابات:وعدوں پروعدے، وعدوں پرووٹ! شہاب مرزا

مہاراشٹر اسمبلی انتخابات : وعدوں پر وعدے، وعدوں پر ووٹ 
شہاب مرزا    9595024421

 مہاراشٹر اسمبلی انتخابات کیلئے اب دس دن باقی ہے بہت جلد آپ کے اردگرد نیتاؤں کا جماو ہو گا وہ آپ لوگوں کے ساتھ بیٹھیں گے گھل مل جائیں گے آپ کے ساتھ کھانا کھائیں گے پھر صحن میں بیٹھ کر چائے کی فرمائش کریں گے سیاسی حالات پر گفتگو ہو گی مسائل کے حل کا بھروسہ ملے گا ساتھ ہی ساتھ کچھ نئے وعدے بھی جوڑ دیے جائیں گے خود کو عام آدمی اور مخلص انسان ثابت کرنے کی ہر ممکن کوشش ہو گی عوام کی پریشانی کو خود کی پریشانی سمجھا جائیے گا پھر دعا کی درخواست کے ساتھ رخصتی ہوگی عوام بھولی ہوتی ہے انکی چکنی چمڑی باتوں پر یقین کر لیتی ہے اور جب وعدوں کی تکمیل نہیں ہوتی تو سوائے پچھتانے کے کوئی راستہ نہیں ہوتا اسلئے وقت رہتے عوام کو ان لوگوں سے ہوشیار رہنے کی ضرورت ہے کیونکہ یہ وہی لوگ ہیں جو پانچ سال قبل الیکشن کے وقت آئے تھے پھر الیکشن جیتنے کے بعد آپ انہیں دیکھنے کے لئے ترس گئے تھے امیدواروں کا کام ہوتا ہے وعدے کرنا لیکن ان وعدوں پر عوام کا یقین کرنا بیوقوفی ہے وعدہ پندرہ لاکھ روپے دینے کا ہوا تھا کیا ہوا؟ عوام اب تک منتظر ہیں اسطرح کے وعدے پھر ہونگے ہوتے رہینگے مگر ان باتوں پر نہیں کیا جانا چاہیے اب انتخابات میں آپ کی ضرورت تھی تو آپ کی یاد ستا رہی تھی اس لئے آپ کے در پر تشریف فرما ہےدوسری اہم بات اخبارات میں خبر چھپوائی جائیگی جس میں لکھا ہو گا فلاں صاحب مسائل کے حل کے لئے وزیر اعلی سے ملاقات کریں گے اگلے دن گرتے پڑتے وزیراعلی کے ساتھ ایک تصویر شائع ہوگیپھر کامیاب نمائندگی کے دعوے کئے جائیں گے پھر بھی مسئلہ حل نہ ہوتو تو ایک دھرنے یا بھوک ہڑتال کا اعلان کیا جائے گا سوشل میڈیا پر نیئ نیئ تصاویر اپ لوڈ کی جائیں گی اور کیپشن میں لکھا جائیگا نیئ سوچ ،نیا انقلاب ، یا پھر تبدیلی کا دوسرا نام فلاں فلاں صاحب۔۔۔۔لیکن بدقسمتی سے ہماری عوام ان لوگوں کی چالوں سے واقف نہیں ہے کیونکہ سیاست کا دوسرا نام منافقت ہے جہاں عوامی خدمت کے نام پر کروڑوں کا بینک بیلنس بنایا جاتا ہے لاکھوں انویسٹ کرکے کروڑوں روپیہ کمانے کا واحد ذریعہ سیاست بن گئی ہےترقیاتی فنڈ کے نام پر کروڑوں روپے بطور کمیشن وصول کیے جاتے ہیںان لوگوں کا چال چلن دیکھئے انتخابات تک رحمدل ہمدرد اور ملنسار اور انتخابات جیتنے کے بعد ان کے پیر زمین پر نہیں ٹکتے !
یہاں سے وہاں جانے کے لیے ہوائی سفر انکا معمول بن جاتا ہے عوامی مسائل سے ان کا کوئی سروکار نہیں رہتا کبھی کبھی تو ان کے پروٹوکول کے چکر میں کسی مریض کی جان بھی چلی جاتی ہے خواب تو خواب ہوتے ہیں جو دکھایا جائے وہ انسانی نفسیات میں بیٹھ جاتے ہیںیہاں بہترین اسٹیڈیم’ وہاں عالیشان شادی خانہ بہت بڑے صنعتی شعبے کا قیام جس میں ہربیروزگارنوجوان کو روزگار کا موقع ‘ ریاست کی سب سے بڑی یونیورسٹی کی تعمیر ‘غرباء کو ذاتی مکانات کی تقسیم اور بھی کئی سنہرے خواب دکھائے جاتے ہیں جس کے آس میں بھولی بھائی عوام چار سالوں تک انتظار کرتی رہتی ہے اور اگلے انتخابات میں نئے وعدے نئے خواب جن کی تکمیل بھی شاید کبھی ہو جاتی پر!ان حالات کو مدنظر رکھ کر معروف شاعر راحت اندوری نے کیا خوب کہا تھا

آج جو صاحب مسند ہیں کل نہیں ہوں گے

 کرائے دار ہیں ذاتی مکان تھوڑی ہے

اب عوام کو ایسے لوگوں سے ہوشیار رہنے کی ضرورت ہے کیونکہ انتخابات آگئے ہے اور وعدے وفاؤں کا موسم آنے والاہے بڑے بڑے جلسے ہونگے لاکھوں کے اسٹیج سجائے جائیں گے نوجوانوں کو پیسوں دیکر پروگرام کامیاب کریں گے بڑے بڑے وعدے اور جھوٹے منصوبوں کا پل باندھ لیں گے پھر چار سالوں تک عوام کو صورت تک نہیں دکھائیں گےان لوگوں کی باتوں پر انکھ بند کرکے یقین کرنا بند کرے اگر یقین کریں گے تو اگلے پانچ سالوں تک دربدر کی ٹھوکریں آپ کا مقدر بن جائیں گے۔۔۔لیڈران عوام کو بے وقوف سمجھتے ہیں ہتھیلی میں جنت دکھاتے ہیں لیکن بدلتے وقت کے ساتھ راے دہنگان میں اتنا شعور تو آ گیا ہے کہ وہ اچھے برے اور نا اہل میں تمیز کرنے لگے ہیںوہ دن ہوا ہوئے جب مندر مسجد اور فرقہ واریت کی بنیاد پر ووٹ مانگے جاتے تھے اور ووٹ دیے بھی جاتے تھے ووٹر امیدوار کی کارکردگی کردار اور صلاحیتوں کو دیکھ کر فیصلہ کریں گے تاہم ایسا ہی ہو یہ ضروری نہیں ہے سیاست کے بازیگر اپنے ترکش سے کونسا تیر نکال لے اور پورا ماحول بدل دے اس تعلق سے کچھ کہا نہیں جاسکتا اس لیے عوام کو دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کے بقا کے لئے بہت سوچ سمجھ کر فیصلہ کرنا ہوگا
ووٹ دینا ہمارا جمہوری حق ہے ووٹ ضرور دیں لیکن یہ ذہین نشین کریں ووٹ کسی کے حق میں شہادت دینے کے باربر ہے مفت کھانے اور چند پیسوں کے بدلے ووٹ کا استعمال نہ کریں بلکہ ضمیر کی آواز سُنیں پچھلے انتخابات کے وعدے ، وعدوں کی تکمیل کو مدنظر رکھیں اپنے ضمیر سے سوال کریں ضمیر کی آواز بھی سنیں صحیح وقت پر صحیح فیصلہ کرنا آپ کے اختیار میں ہے ووٹ دیتے وقت اپنے مسائل کو مدنظر رکھئے ووٹ دینے سے پہلے نمائندے کی امانت داری اور دیانتداری کا امتحان ضرور لے اپنے جمہوری حق کا ایسا استعمال نہ کریں گے اگلے پانچ سال تک اس کا خمیازہ بھگتنا پڑے ووٹ دینے سے پہلے اپنی بیش قیمتی ووٹ کی طاقت، اہمیت، دینی اور شرعی حیثیت اچھی طرح سمجھ لے ووٹ صرف ووٹ نہیں کسی کے حق میں شہادت ہیں امانت ہےکسی کے حق میں جھوٹی شہادت دے کر گناہ کبیرہ کا ارتکاب نہ کرے سوچ سمجھ شعور سے ووٹ کرے جس سے حقیقی تبدیلی آئے…

Show More

Related Articles

جواب دیجئے

Close