عجیب و غریب

حیدرآباد: ملزمین نے سازش کے تحت پنکچرکی تھی ڈاکٹرکی اسکوٹی، زبردستی شراب پلائی، پھرمنہ بند کرکے کی اجتماعی آبروریزی

حیدرآباد: ملزمین نے سازش کے تحت پنکچرکی تھی ڈاکٹرکی اسکوٹی، زبردستی شراب پلائی، پھرمنہ بند کرکے کی اجتماعی آبروریزی

حیدرآباد: تلنگانہ کی راجدھانی حیدرآباد میں خاتون ویٹنری ڈاکٹرسے آبروریزی کے بعد قتل اورپھرلاش کوجلا دینے کے حادثے میں کئی بڑے انکشاف ہوئے ہیں۔ پولیس نے اس معاملے میں ابھی تک چارنوجوانوں کوگرفتارکیا ہے۔ ان کی شناخت محمد عارف، نوین، چنتاکنتا کیشاولو اورشیوا کے طورپرہوئی ہے۔ پولیس جانچ میں پتہ چلا کہ ملزمین نے واردات کو انجام دینے کے لئے سازش کے تحت خاتون ڈاکٹرکی اسکوٹی پنکچرکی تھی۔ تاکہ وہ خاتون ڈاکٹرکو اپنے جال میں پھنسا کرواردات کو انجام دے سکیں۔

پولیس کے مطابق، چاروں ملزمین نے خاتون ڈاکٹرکوٹول پلازہ پراسکوٹی پارک کرتے دیکھا تھا۔  تبھی ایک ملزم شیوا نے اس کی اسکوٹی کی ہوا نکال دی۔ جب خاتون ڈاکٹراپنی ڈیوٹی پوری کرکے گھرکے لئے نکلی، تواس نے دیکھا کہ اسکوٹی پنکچرہے۔ رات کافی ہونے کے سبب خاتون ڈاکٹرنے اپنی چھوٹی بہن کو فون کیا اوراسکوٹی خراب ہونے کے بارے میں بتایا۔ ساتھ ہی بہن سے یہ بھی کہا کہ انہیں کچھ ٹھیک محسوس نہیں ہورہا ہے، ڈرلگ رہا ہے۔

فیملی کے ذریعہ پولیس میں دیئے گئے بیان کے مطابق، چھوٹی بہن نے خاتون ڈاکٹرکو اسکوٹی وہیں چھوڑکرکیب سے گھرآنے کا مشورہ دیا تھا۔ اس دوران ملزم چنتاکنتا کیشاولو اورشیوا وہاں مدد کے لئے پہنچ گئے۔ شیوا اسکوٹی ٹھیک کرانے کے بہانے خاتون ڈاکٹر کو کچھ دورلے گیا، جہاں باقی ملزم طاق لگائے بیٹھے تھے۔ جیسے ہی خاتون ڈاکٹروہاں پہنچی، ملزمین نے انہیں یرغمال بنا لیا۔

اجتماعی آبروریزی سے قبل زبردستی پلائی شراب

پولیس جانچ میں پتہ چلا ہے کہ درندگی سے پہلے ملزمین نے خوب شراب پی۔ خاتون ڈاکٹرکو بھی زبردستی شراب پلائی۔ اس کے بعد ملزم محمد عارف نے خاتون ڈاکٹرکا منہ ہاتھ سے بند کردیا، تاکہ وہ چیخ نہ سکے۔ اس دوران چاروں ملزمین نے باری باری سے خاتون ڈاکٹرسے آبروریزی کی۔ مانا جارہا ہے کہ سانس نہیں لے پانے کے سبب خاتون ڈاکٹرکا دم گھٹ گیا اور موت ہوگئی۔

( نیوز 18 اردو )

مزید پڑھیں

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیجئے

Close