دہلی

مجھے پاکستانی کہہ کر بلایا جاتا ہے اس لیے میں کہنا چاہتا ہوں کہ میں پاکستانی ہوں:ادھیر رنجن

نئی دہلی ۔۱۶؍جنوری: سی اے اے کو لے کر ہنگامہ رکنے کا نام نہیں لے رہا ہے۔ کانگریس سمیت تمام اپوزیشن پارٹیاں غلط قانون کی وجہ سے حکومت کو نشانہ بنارہی ہیں۔کانگریس کے لوک سبھا میں لیڈر ادھیر رنجن چودھری نے کہا ہے کہ بی جے پی والے ان کا تعارف پاکستانی کے طور پر کراتے ہیں اور میں آج کہنا چاہتا ہوں کہ میں پاکستانی ہوں۔اکثر اپنے بیانات کی وجہ سے ادھیررنجن چودھری بحث میں رہتے ہیں اور اپنے اس تازہ بیان کے بعد بہت ممکن ہے کہ وہ ایک بار پھر سرخیوںمیں آ جائیں۔انہوں نے کہا مجھے پاکستانی کہہ کر بلایا جاتا ہے اور آج میں کہنا چاہتا ہوں کہ میں پاکستانی ہوں۔آپ جو کرنا چاہتے ہیں وہ کر لیں۔ انہوں نے بی جے پی حکومت پر نشانہ لگاتے ہوئے کہا آج ہمارے ملک میں کوئی صحیح بات نہیں کہہ رہا ہے کیونکہ آپ جیسے ہی سچ کہتے ہو آپ کو غدار قرار دیا جاتا ہے۔یہ ملک نریندر مودی اور امت شاہ کے باپ کا نہیں ہے۔انہوں نے براہ راست طور پر پی ایم اور وزیر داخلہ پر نشانہ لگاتے ہوئے کہا ہندوستان کسی کے باپ کی ملکیت نہیں ہے۔ہمیں وہ کرنے کو کہا جاتا ہے جو مودی اور شاہ کہتے ہیں لیکن ہمیں یہ قبول نہیں ہے۔ان دونوں کو سمجھنا چاہئے کہ وہ لوگ آج ہیں لیکن کل نہیں ہوں گے۔

مزید پڑھیں

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیجئے

Close