تنظیم علمائے حق کی اپیل قوم مسلم کے باشعور افراد سے!

تنظیم علمائے حق کی اپیل قوم مسلم کے باشعور افراد سے

نوادہ پریس ریلیز……. ملک کے موجودہ حالات کے تناظر میں ہمارا نام ووٹر لسٹ میں ہونا کتنا ضروری اور اہم ہے اس سے ہندوستان کے تمام مسلم باشعور افراد اچھی طرح واقف ہیں اسی سلسلے میں آج تنظیم کے مرکزی دفتر دارالعلوم فیض الباری نوادہ میں تنظیم کے سرپرست مولانا نعمان اخترفائق جمالی صاحب مہتم دارالعلوم فیض الباری کی ایماء پہ ایک اہم نشست مولانامحمدجہانگیرعالم مہجورؔالقادری کی صدارت میں بلائی گئی جس میں نوادہ ومضافات کے مدارس اہلسنت و ائمہ مساجد نے کافی تعدادمیں شرکت کی اس موقع پر سرپرست مولانا نعمان اخترفائق جمالی نے کہا کہ این آر سی کی بات شوشل و پرنٹ میڈیا پہ بہت زور و شور سے بازگشت کررہی ہے اور مسلمانوں کو غیر ملکی ثابت کرنے کی ایک منظم سازش چل رہی ہے ایسی صورت میں اس سازش کو ناکام کرنے کے لئے ہم تمام مسلمانوں کو چاہیے کہ پہلی فرصت میں گاؤں گاؤں قریہ قریہ اور شہر شہر جا کر تمام مسلمان مرد و خواتین کو بیدار کریں اور ووٹر لسٹ میں 18 سال کے اپنے گھر کے بچے اور بچیوں کا نام ووٹر لسٹ میں ضرور اندراج کرائیں، تنظیم کےصدر مولانامحمدجہانگیرعالم مہجورؔالقادری نے تمام علماء، ائمہ سے دردمندانہ انداز میں اپیل کی ہے آپ لوگوں پہ قوم و ملت کی نمائندگی کی ذمہ داری دی گئی ہے لہٰذا آپ تمام علمائے کرام و ائمہ مساجد اپنے اپنے بلاک کے تمام دیہی و شہری علاقوں میں ووٹر لسٹ میں نام جوڑوانے اور نام میں اگر کچھ غلطی ہوگئی ہو تو اس کی اصلاح کروانے کی جنگی سطح پہ ایک مہم چھیڑ دیں تاکہ مسلم سماج کا ایک بھی فرد جس کی عمر 18 سال ہوگئی ہو چھوٹنے نہ پائے اور یہ کام یکم ستمبر سے 8 اکتوبر 2019 تک چلے گا اس کے لئے آپ آن لائن سارے کام کو انجام دے سکتے ہیں کسی بھی سائبر کیفے کے یہاں جا کر یہ کام کروا سکتے ہیں آپ جانتے ہیں کہ بہت تیزی سے ملک کے حالات بدل رہے ہیں اگر اس بار آپ نے تھوڑی سی بھی کوتاہی کی تو اس کے لئے بہت بڑا خمیازہ بھگتنے کے لئے تیار رہنا ہو گا اسی لئے تمام علماء و ائمہ اپنے اپنے مدارس میں دینی جلسوں میں، جمعہ کی نماز سے قبل جمعہ کے خطاب میں اس کے تعلق سے قوم کو بیدار کریں اور جہاں تک ممکن ہو اس بابت صحیح رہنمائی کرکے اپنا یہ ملی فریضہ ادا کریںاس نشست میں اکبرپور، روہ وارث علی گنج ،کواکول، ناردی گنج، نرہٹ، سردلا، مسکور، کاشی چک، ہسوا، پکری براواں، گووند پور، اور رجولی بلاک کے علماء و ائمہ نے شرکت کی 

اپنا تبصرہ بھیجیں