بہار و سیمانچل

سہرسہ : سمری بختیارپورکے رانی باغ میں شاہین باغ،سبزی باغ اورملک کے دوسرے مقامات طرح سی اے اے،این پی آراوراین آرسی کے خلاف احتجاج شروع

سہرسہ (زیڈرحمن)آج سمری بختیارپورکے رانی باغ میں شاہین باغ،سبزی باغ اورملک کے دوسرے مقامات میں سی اے اے،این پی آراوراین آرسی کے خلاف ہورہے دھرنے اوراحتجاج کے طرزپرسمری بختیارپورکی دستوربچاوتحریک کمیٹی کی جانب سے غیرمعینہ مدت تک کے لیے دھرنے کاآغازکیاگیا۔بام سیف لیڈرچھتری یادوکی صدارت اورصحافی شہنوازبدرقاسمی کی منعقدنظامت میں چلے دھرنامیں کانگریس،جاپ،راجداوردوسری سیکولرپارٹیوں کے لیڈران نے دستورہندکے خلاف مرکزی حکومت کی جانب سے لائے گئے سی اے اے قانون اورمستقبل قریب میں این پی آراوراین آرسی نافذ کرنے کی جوتیاری چل رہی ہے اس کے نقصانات پرتفصیلی گفتگوکرلوگوں کواس تحریک کومزیدتقویت دینے کی اپیل کی۔سہرسہ کے ایم ایل اے ارون یادونے اپنے خطاب میں کہاکہ مسلمانوں نے پاکستان ہجرت کرنے کی جناح کی اپیل کوخارج کراپنے ملک میں رہنے کوترجیح دی اس لیے اس ملک میں اپنی ہرقسم کی آزادی کے ساتھ رہنے کاحق جس طرح ہندووں کوحاصل ہے اسی طرح مسلمانوں کوبھی ہے یہاں اپنی مکمل آزادی کے ساتھ رہنے کاحق حاصل ہے۔کسی حکومت کی مجال نہیں کہ وہ اس ملک سے کسی مسلم کونکال باہرکرے۔مقامی ایم ایل اے ظفرعالم نے کہاکہ مودی حکومت نے اس ملک کی معاشی حالت کوکمزورسے کمزورترکردیاہے۔انہوں نے کہاکہ نوٹ بندی ایک بہت بڑاگھوٹالہ تھاجسے اس حکومت نے بڑی عیاری اورچالاکی سےانجام دیا۔جس کی وجہ سے مہنگائی بھی عروج پرپہنچی اوربے روزگاری میں بھی حددرجہ اضافہ ہوا۔ملک کی یہ معاشی حالت جب عوام کے سامنے آنے لگی تواس سے عوام کادھیان ہٹانے کے لیے اس حکومت نے 370ہٹانے ،تین طلاق کاقانون اوربابری مسجدکافیصلہ کیاجس سے ملک کوذرہ برابر فائدہ نہیں ہوابلکہ اس فیصلہ سے عوام کے مسائل مزید الجھ گئے اورپورے ملک میں افراتفری کاماحول پیداہو گیا۔ان کے علاوہ دھرناکو بام سیف کے چھتری یادو،جاپ کے پن پن یادو،کانگریس لیڈر بندیشوری یادو،بہوجن مکتی مورچہ کے موتی کمارپاسوان،کانگریس لیڈرلکشمی کانت شرمااورمجنوں حیدروغیرہ نے خطاب کیااورسبھوں نے اپنے خطاب میں سی اے اے،این پی آراوراین آرسی سے خصوصانچلے طبقے کے لوگوں کوچاہے وہ کسی مذہب سے تعلق رکھتے ہیں پہنچنے والے نقصانات پرتفصیلی گفتگوکی اوراس کے خلاف لوگوں کواس قانون کی واپسی تک اس دھرنے کوجاری رکھنے اوراس میں کثیرتعدادمیں شرکت کرنے کی اپیل کی۔واضح رہے آج کے دھرنامیں خواتین نے بھی بڑی تعدادمیں شرکت کی اوراسٹیج پرآکراس قانون کے خلاف جم کرتقریریں کیں اورفلک شگاف نعرے لگائے وہیں اس دھرنامیں الشفامیڈیکل کی جانب سے میڈیکل انچارج ڈاکٹرابوہریرہ نے ایک فری ہیلتھ کیمپ کااسٹال لگاکرضرورت مندوں کوطبی امدادفراہم کی۔دھرنامیں سیدہلال اشرف،سیدکمال اشرف،حافظ کوثرامام،مسعوداخترجاوید،چاندمنظرامام،وجیہ احمدتصور،مفتی ظل الرحمن قاسمی، پروفیسرنعمان،عبدالسلام امین،حافظ فیروز عالم وغیرہ سمیت علاقے کے عوام کی ایک بڑی تعداد موجود تھی۔

مزید پڑھیں

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیجئے

Close