اہم خبریں

جذبہ اور آستھا کی بنیاد پر رام مندر تعمیر کے حق میں فیصلہ حیرت انگیز: مولانا عرفی قاسمی

جذبہ اور آستھا کی بنیاد پر رام مندر تعمیر کے حق میں فیصلہ حیرت انگیز: مولانا عرفی قاسمی
نئی دہلی،10نومبر (پریس ریلیز) بابری مسجد اراضی کے حق ملکیت مقدمہ میں متنازع زمین رام مندر کی تعمیر پر عدالت عظمی کے حالیہ فیصلہ کا احترام کرتے ہوئے آل انڈیا تنظیم علماء حق کے قومی صدر مولانا محمد اعجاز عرفی قاسمی نے اپنے ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ عدالت عظمی نے متنازع اراضی کے بارے میں جس طرح عقیدہ، جذبہ اور آستھا کی بنیاد پر رام مندر تعمیر کے حق میں فیصلہ دیا ہے وہ حیرت انگیز ہے۔
انہوں نے دعوی کیا کہ اس فیصلے سے ملک کے انصاف پسند اور امن پرور افراد کے درمیان سخت بے اطمینانی کی لہر پائی جاتی ہے۔ انھوں نے کہا کہ ہم عدالت عظمی کے ہر فیصلہ کا، خواہ وہ ہمارے حق میں ہو یا ہمارے خلاف، اس کا صدق دلی سے احترام کرتے ہیں اور اس پر عمل کرنے کے لیے پابند عہد ہیں، مگر جس طرح مسلم فریق کے دلائل و شواہد اور ان کی طرف سے پیش کردہ مضبوط تاریخی حقائق کو نظرانداز کرتے ہوئے آرکیالوجیکل سروے آف انڈیا اور ہندؤوں کی آستھا کو بنیاد بناکر فیصلہ دیا گیا ہے، اس کی وجہ سے ملک کے اس طبقہ میں ایک قسم کی بے چینی پائی جاتی ہے جو ہر متنازع معاملہ میں ملک کی عدلیہ سے رجوع کرتے ہیں۔
انھوں نے کہا کہ عدالت نے خود کہا تھا کہ فیصلہ آستھا اور آثار قدیمہ کی رپورٹ کی بنیاد پر نہیں کیا جائے گا، مگر اس کے بر عکس سپریم کورٹ نے دونوں ہی بنیادوں کو اپنے جاری کردہ فیصلہ میں تسلیم کرلیا جو عام لوگوں کی سمجھ سے بالا تر ہے۔ انھوں نے کہا کہ جب عدالت میں ملکیت کا مقدمہ دائر تھا اور اس کے ثبوت میں مسلم فریق کی طرف سے پیش ہونے والے وکلا نے دلائل اور دستاویز کی رو سے یہ ثابت کردیا تھا کہ یہاں صدیوں قبل سے مسجد تعمیر تھی اور جب عدالت عظمی نے اپنے فیصلہ میں یہ بھی واضح کردیا کہ مسجد کسی مندر کو منہدم کرکے تعمیر نہیں کی گئی تھی، تو پھر کس بنیاد پر متنازع اراضی ہندو فریق یعنی رام للا کے حوالے کرکے رام مندر تعمیر کا راستہ صاف کردیا گیا۔
مولاناعرفی نے کہاکہ آخر کس بنیاد پر مسلمانوں کی دل جوئی کے لیے انھیں 5ایکڑ متبادل زمین فراہم کرنے کا فیصلہ سنادیاگیا۔ انھوں نے کہا کہ ہمیں ہی نہیں، پورے ملک اور پوری دنیا کو یہ امید تھی کہ عدالت حقائق اور شواہد کی بنیاد پر فیصلہ سنائے گی، مگر سارے دلائل سے صرف نظر کرتے ہوئے مسجد کی زمین مندر کے حوالے کردی گئی، جو ایک مسلمان کے لیے انتہائی تکلیف دہ بات ہے۔
انھوں نے کہا کہ ہمیں عدالت کے فیصلہ کابہر حال احترام کرنا ہے اور ملک میں امن و شانتی اور خیرسگالی اور فرقہ وارانہ ہم آہنگی کی فصا بحال کرنا ہے۔ اس موقع سے شرپسند عناصر فتح جلوس نکال کر مسلمانوں کے جذبات کو ٹھیس پہنچا رہے ہیں، حکومت کو ایسے عناصر کو پابند سلاسل کرنے کی ضرورت ہے۔ تاکہ ملک کی فضا مکدر نہ ہو۔

مزید پڑھیں

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیجئے

Close