عجیب و غریب

ندوۃ العلماء میں مولاناسلمان ندوی اور ان کے حامیوں کا ہنگامہ!

ندوۃ العلماء میں سلمان ندوی اور ان کے حامیوں کا ہنگامہ
توحید عالم ندوی کو دوسری شاخ میں منتقل کیے جانے پر انتظامیہ کے خلاف نعرے بازی
لکھنو۔ ۱۰؍اکتوبر: مولانا سید محمد حمزہ حسنی ندوی نائب ناظم ندوۃ العلماء لکھنو کی ایک پریس ریلیز کے مطابق’’ آج دارالعلوم ندوۃ العلماء میں جو ناخوشگوار واقعہ پیش آیا، اس کی سچائی یہ ہے کہ دارالعلوم کے ایک مدرس مولوی توحید عالم ندوی کو بعض اسباب کی بنا پر مدرسہ اسلامیہ بلاقی اڈہ منتقل کیاگیا، اس کی مخالفت میں مولانا سلمان حسینی ندوی نے اپنے بیٹوں یوسف حسینی، یونس حسینی، توحید عالم ندوی اور ندوہ کے باہر کے لڑکوں کے ساتھ دارالعلوم کے دفتر اہتمام اور دفتر نظامت میں جاکر ہنگامہ آرائی کی، ان کے ساتھ نعرے بازی کرتے ہوئے چلے گئے۔ اس واقعہ سے حضرت ناظم صاحب دامت برکاتہم ندوۃ العلماء اور دیگر اساتذہ و ذمہ داروں کو بہت تکلیف ہوئی ہے۔ مولانا سید محمد حمزہ حسنی ندوی نے مزید کہاکہ ۱۲ تاریخ کو بعد نماز مغرب مسجد دارالعلوم ندوۃ العلماء میں جلسہ کی جو اطلاع سوشل میڈیا پر وائرل کی جارہی ہے وہ بالکل بے بنیاد ہے، اس وقت ندوہ میں کوئی جلسہ نہیں ہوگاـ‘‘۔ میڈیا ذرائع کے مطابق مولانا سلمان ندوی کو دارالعلوم ندوہ میں سخت مخالفت کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے اور حامی و مخالف گروپ کے درمیان زبردست جھڑپ کی خبریں سامنے آ رہی ہیں۔ سلمان حسینی ندوی نے دارالعلوم ندوۃ العلماء کی انتظامیہ پر یہ الزام عائد کیا ہے کہ وہ دارالعلوم سے ان کے حامیوں کو نکال رہے ہیں تاکہ وہ کمزور پڑ جائیں۔ سلمان ندوی نے یہ بھی کہا کہ اعظم خان اور اسدالدین اویسی جیسے لوگ انھیں نہ صرف ہٹانا چاہتے ہیں بلکہ امن کی بات کرنے کی وجہ سے انھیں ہر طرح سے نشانہ بنا رہے ہیں۔واضح رہے کہ سلمان ندوی صرف متنازعہ زمین سے بابری مسجد کو منتقل کرنے کی ہی بات نہیں کرتے ہیں بلکہ تین طلاق کے معاملے میں بھی وہ مودی حکومت کے اقدام کے حامی رہے ہیں اور خال المومنین ، کاتب وحی حضرت امیر معاویہ بن سفیان رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو صحابہ سے خارج قرار دیتے ہوئے انہیں اہل بیت رضوان اللہ تعالیٰ علیہم اجمعین پر ظلم کرنے والا تصور کرتے ہیں۔

Show More

Related Articles

جواب دیجئے

Close