اہم خبریں

ماب لنچنگ غیر ملکی ہے، بھارتی نہیں! بھاگوت

ماب لنچنگ غیر ملکی ہے ، بھارتی نہیں !
تشدد کے واقعات کو لنچنگ نہیں کہا جاسکتا ، ایسے واقعات کو بھارتی روایت کے ساتھ نہیں جوڑا جاسکتا : بھاگوت
ناگپور ۔ 08 اکتوبر 2019
سخت گیر ہندو تنظیم راشٹریہ سویم سیوک سنگھ کے سربراہ موہن بھاگوت نے ناگپور میں وجے دشمی کے موقع پر کہا کہ بھارت کی روایات میں ہجومی تشدد کا وجود نہیں ہے۔ بعض تشدد کے واقعات کو لنچنگ نہیں کہا جاسکتا اور ایسے واقعات میں ملوث افراد کے خلاف کارروائی ہونی چاہئے۔

ناگپور میں آر ایس ایس ہیڈکوارٹر پر RSS کے سالانہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے سرسنگھ چالک موہن بھاگوت نے کہا کہ ماب لنچنگ سے سنگھ کا کوئی لینا دینا نہیں ہے۔ انہوں نے ماب لنچنگ پر سخت قانون بنائے جانے کی وکالت کی۔ انہوں نے کہا کہ بعض چھوٹے گروپز کی طرف سے ایسے واقعات رونما ہونے کو بھارتی روایت کے ساتھ نہیں جوڑا جاسکتا۔

انہوں نے کہا کہ لنچنگ کی اصطلاح ، بھارتی نہیں ہے بلکہ غیر ممالک سے آئی ہے۔ اس اصطلاح کے ماخذ پر تبصرہ کرتے ہوئے انہوں نے دعویٰ کیا کہ ایک خاتون کو سنگسار کیا جارہا تھا تو حضرت عیسیٰ نے ہجوم سے سوال کیا کہ پہلا پتھر وہی مارے گا جس نے کوئی غلطی نہ کی ہو۔

انہوں نے کہا کہ اسی واقعے سے پتہ چلتا ہے کہ لنچنگ کہا ں ہوتی تھی۔

بھاگوت نے لنچنگ کو ’’چھٹ پٹ سموہوں کی کارروائی‘‘ قرار دیتے ہوئے کہا کہ ہمارے اوپر لفظ تھوپے جارہے ہیں اور ہمارے ملک کو بدنام کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ نظم و ضبط کی خلاف وزری کرکے ظلم کا چلن سماج کے باہمی تعلقات کو برباد کرتا ہے، یہ چلن ہمارے ملک کی روایت نہیں ہے اور نہ ہی ان کے لیے آئین میں کوئی جگہ ہے۔ چاہے کتنا بھی اختلاف ہو، آئین و قانون کے حد میں رہنا چاہیے۔ سب کو نظم و ضبط سے چلنا ہوگا۔

موہن بھاگوت نے کہا کہ آر ایس ایس کے کارکنان اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کام کر رہے ہیں کہ بھارت میں مختلف طبقوں کے درمیان کوئی تفریق نہ ہو۔

انہوں نے کہا کہ دنیا میں ایسی کوئی جگہ نہیں ہے جہھز مختلف قسم کے لوگ اتنے امن و امان کے ساتھ رہتے ہوں۔انہوں نے ماب لنچنگ سےپیدا ہونے والی منفی تصویر کے بارے میں کہا ’لیکن یہ چلتا ہے، اس سے خبردار رہنے کی ضرورت ہےـ‘

بھاگوت نے کہا کہ بھارتی روایت یہ ہے کہ دو گاؤں کے درمیان پانی کے مسئلے پر جھگڑا چل رہا تھا اور بدھ نے وہاں جاکر انکے درمیان صلح جوئی کی۔

بھاگوت نے مرکزی حکومت کی طرف سے اٹھائے گئے کئی اقدامات کی تعریف کی۔ انھوں نے کہا کہ گزشتہ دنوں سے ملک بہت اچھا چل رہا ہے۔ حکومت کے پاس سخت فیصلے کرنے کی طاقت ہے۔ ملک پہلے سے زیادہ محفوظ ہے۔ جموں و کشمیر سے دفعہ 370 کو ہٹانا بڑا قدم ہے۔ چندریان۔2 نے دنیا بھر میں بھارت کا نام روشن کیا ہے۔

انھوں نے کہا کہ ملک بھر میں جوش و خروش اور خوداعتمادی کے ماحول میں اضافہ ہوا ہے۔

بھاگوت نے اس موقع پر شستر پوجا بھی کی جس کے دوران کئی قسم کے ہتھیاروں کے سامنے منتر پڑھے گئے۔

Show More

Related Articles

جواب دیجئے

Close