بزم سخن کا طرحی کلام!خطیب حیدر آزادنگر ارریہ بہار

بزم سخن کا طرحی کلام*
*خطیب حیدر آزادنگر ارریہ بہار*

*غزل*

جنگ  یا  عشق   برملا  ہوگا*

*جو بھی ہونا ہے فیصلہ ہوگا*

*آۓ دن قتل و خون ریزی ہے*

 *ملک  کا  تجھ  سے کیا بھلا ہوگا*

*پڑھ  کے  اخبار ایسا لگتا ہے*

 *پھر  نیا  کوئی  حادثہ ہوگا*

*عزتیں  لوٹتا  ہے کمسن کی*

*وہ تو وحشی سے  بھی برا ہوگا*

*بھوکے  مر جاؤں یہ گوارہ ہے*

 *لقمہ چھینوں یہ کب روا ہوگا*

*خود   کی  تقدیر  کا  پتہ  ہی نہیں*

 *ہست ریکھا جو دیکھتا ہوگا*

*میری بہنوں حجاب میں رہنا*

*راستے  میں  وہ  بے حیا ہوگا*

*کیسا دن ہوگا وہ بھی محشر کا*

*اپنا  اپنوں  سے ہی جدا ہوگا*

*دل  کو  رکھیے  گا  تھام  کر اپنے*

*آج   شاعر   غزل   سرا   ہوگا*

*سر  پہ  سجدے  کا  ہے  نشاں اسکے*

 *ایسا    لگتا   ہے  پارسا  ہوگا*

*کیسا دن ہوگا وہ بھی محشر کا*

*اپنا اپنوں سے ہی جدا ہوگا*

*اس  کو  کتنی  خوشی ملی ہوگی*

*ماں کو حج پہ جو بھیجتا ہوگا*

*تیرے اعمال اچھے جب ہوں گے* 

*پھر  ترے  حق  میں  فیصلہ ہوگا*

*اس  کا  کردار  صوفیانہ ہے*

 *ہر  جگہ  اس کا تذکرہ ہوگا*

*شعر تم نے کہا ہے جو حیدر* 

*گر  عمل  ہو  تو  فائدہ  ہوگا*

اپنا تبصرہ بھیجیں