غزل : شام غم کو اس طرح کچھ ہم نے حیراں کردیا !حسین احمد ہمدم

غزل

حسین احمد ھمدم

شام غم کو اس طرح کچھ ہم نے حیراں کردیا

یاد میں اس کے کئی صحرا گلستاں کردیا

دیکھ لی اے زندگی ہم نے تیری نیرنگیاں

 اس لئے ہر آرزو کی موت آساں کردیا

بے وفا اس کو کہیں اپنا تو یہ شیوہ نہیں

 ہے خطا اپنی سراسر دل کو ناداں کردیا

ساغرو مے کے رہیں محتاج آخر کب تلک

خون دل پینا ہی اب نشے کا ساماں کردیا

پھر کلی کی چاک دامانی کا موسم آگیا

 سنگ دل لوگوں نے پھر جشن بہاراں کردیا

بے سکوں ہونا بھی کچھ توزندگی کی شرط ہے

دشمن جاں ہی کو ھمدم جان جاناں کردیا

اپنا تبصرہ بھیجیں