اشعار و غزل

  غزل ! نتیجہ فکر عبدالباری زخمی پریم نگر ارریہ

                              غزل
      نتیجہ فکر عبدالباری زخمی پریم نگر ارریہ
مجھے  تو  اتنا  بتا  دے  ساقی کہ  میکدہ  سے  پیام   کیا ہے
لے پی لیا میں نے اشک غم کو اب اس کے آگے میں جام کیاہے
ہے  گر  چہ   فرماں  روا   ہمارا  بنا  رہے  تو  میری   بلا    سے
مگر  حکومت   میں  تیری  حاکم   رعیتوں  کا نظام  کیا  ہے
غرور  عہدہ  میں  مبتلا  ہے  بس ایک  خطے  کا  شاہ   بن کر
مرے   شہنشاہ   کے  آگے   احمق  بتا  ترا    احتشام    کیا  ہے
خرید   لیتا   تجھے   یقینا   خبر   جو  ہوتی   او  بکنے   والے
کثیر  قیمت تو  لگ  ہی  جاتی  یہ کہہ تو  دیتا کہ دام کیاہے
ترے   لئے  تھا وہ  ایک  ڈھانچا   مزید   ویران   ایک    معبد
یہ ہم سے پوچھو کہ اس جگہ کا ہمارے دل میں مقام کیاہے
عوام  بھارت   ہے ایک  آندھی  خبر نہیں کیا تجھے   ستمگر
اڑا ہی  دیں گے  ضرور  اک   دن  ہوا   کے   آگے   غمام  کیاہے
عجیب   حیرت    کی بات   کہ   فقیر  ہے   وہ    امیر    میرا
جسے   نہیں  ہے  تمیز   اتنی  حلال  کیا   ہے   حرام   کیا ہے
میں سیکھنےکےغرض سے مسجد میں آگیاہوں امام صاحب
ابھی مجھے کچھ پتہ نہیں ہے کہ سجدہ  کیاہے قیام  کیاہے
تمہیں   سنانا   ہے جو  سناو  ہمیں   نہیں  اعتراض   زخمی
مگر جو سب کےدلوں کو چھو لے پھر اس کےآگےکلام کیاہے
مزید پڑھیں

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیجئے

Close