اشعار و غزل

غزل ، یہاں کرلیں وہاں کرلیں تم ہی بولو کہاں کرلیں ، از : مولانا محمد جہانگیرعالم مہجورؔالقادری، نوادہ

غزل

از : مولانا محمد جہانگیرعالم مہجورؔالقادری، نوادہ

یہاں کرلیں وہاں کرلیں تم ہی بولو کہاں کرلیں

اجازت دو کہ اپنی داستان غم بیاں  کرلیں

رہ اسلاف پہ چلنے کا ہو اب بھی مزاج اپنا

تو پھر قبضے میں اپنے ہم تو یہ سارا جہاں کرلیں

 جہاں سچ بولنے سے ہر بشر پہ خوف طاری ہو

وہاں کیوں کر بھلا ہم بھی رفو اپنی زباں کرلیں 

بہت پرکیف ہے واللہ ترا بھی تذکرہ جاناں 

ہم اپنے نام تیری زندگی کی داستاں کرلیں

 فریب و دام سے بچنا جو چاہیں آپ دنیا میں

 تو پھرہر گام پہ عقل و خرد کو پاسباں کرلیں 

نہیں آئی ہے راس ابتک فضامجھ کو نشیمن کی

چلو اس سے الگ ہو کے ہم اپنا آشیاں کرلیں

 شعور زندگی بخشا ہے جن کی رہنمائی  نے

اے مہجور ان پہ ہم اپنےنچھاورجسم وجاں کرلیں

از : مولانا محمد جہانگیرعالم مہجورؔالقادری، نوادہ

رابطہ نمبر 9801511673,8271854504 

مزید پڑھیں

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیجئے

Close